زمین سے 186 نوری سال کے فاصلے پر 3.14 دن اپنا چکر مکمل کرنے والا والا پائی سیارہ دریافت ہوا ہے۔ فوٹو: فائل

زمین سے 186 نوری سال کے فاصلے پر 3.14 دن اپنا چکر مکمل کرنے والا والا پائی سیارہ دریافت ہوا ہے۔ فوٹو: فائل

واشنگٹن: ماہرینِ فلکیات نے 186 نوری سال کے فاصلے پر ایک دلچسپ سیارہ (ایگزوپلانیٹ) دریافت کیا ہے جو صرف سورج کا دائرہ ہے 3.14 دن میں ایک چکر مکمل ہو گیا ہے۔ اس طرح اس ستارے کی گردش بہت تیزی سے گھومتی ہے۔ اسی وجہ سے اس پائی سیارے کا نام لیا گیا لیکن اس کا آفیشل نام ٹوپ 315 بی ہے۔

پائی ایک ریاضیاتی مستقل ہے جو کسی بھی دائرے کا قطر اور اس کے گھریلو تنازعہ کوسٹ ظاہر کرسکتا ہے اور اس کی قدر 3.14 ہے۔ ماہرین نے اس سیارے کو پائی زمین بھی کہا۔ لیکن برس کئی سال کے مشاہدات کے بعد ماہرین نے اس کی تصدیق نہیں کی۔

2017 میں کیپلر خلائی دوربین کو دریافت کیا گیا تھا اور فلکیات کے دانتوں نے اسے مسلسل نظر انداز کیا تھا۔ یہ سیارہ ایک بار پھر ستارے کے گھیرے میں ہے جس کی حالت سورج محض 20 فیصد ہے۔ کیپلر 20 اس پر عبور یا ٹرانزٹ کوٹ بھی ہے۔

اس کے بعد فلکیات دانوں کی دوسری ٹیمیں بھی اس کے بارے میں غور سے نہیں آئیں گی اور اس کے بعد اس پر غور کیا جائے گا۔ اس طرح اسیپیکیولوس دوربینوں کے کمرے کی فروری ، مارچ اور مئی میں مشاہدات آنے والے۔ اس طرح سیارے کی مزید پریشانیاں آئی جیٹ۔

محتاط انداز کے مطابق اس سیارے کی زمین کی 95 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ شاید یہ گیس کی جگہ ایک پتھریلا سیارہ ہے۔ ہم نظامِ شمسی میں زمین ، زہرہک ، عطارد اور مریخ کے سیاروں کی فہرست میں شامل ہیں۔



Source by [author_name]

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here