میڈیا میڈیا 74 سالہ ولبینکس کی بہادری کی تعریف کر رہا ہے۔ (فوٹو: یوٹیوب اسکرین گریب)

میڈیا میڈیا 74 سالہ ولبینکس کی بہادری کی تعریف کرے گی۔ ’فلوریڈا اصل آدمی‘ ‘خطاب بھی کرتا ہے۔ (فوٹو: یوٹیوب اسکرین گریب)

فلوریڈا: رچرڈ ولبینکس کی عمر 74 سال ہے اور وہ امریکی ریاست فلوریڈا کے علاقوں ایسٹیرو کے رہائشی ہیں۔ ہر ہفتے ایک حملہ آور مگرمچھ کا تھا جب اس نے کرسی پر پالتو کٹے کو چھڑا لیا تھا۔ جنگلی حیات کی ایک مقامی تنظیم کی خودکار سرگرمی اس کے تمام منظر کی شکل کی شکل میں محفوظ رہتی ہے اگلے ہیرو میڈیا پر جاری میڈیا اور ویڈیو وائرل واقعی۔

یوٹیوب کی میڈیا میڈیا چینلز پر اس ویڈیو جزیرہوی یا مکمل طور پر رکشے ہوچکے ہیں اور اب ان میں دس لاکھ سے زیادہ افراد رہ چکے ہیں جو ہزاروں مرتبہ شیئر بھی ہیں۔

https://www.youtube.com/watch؟v=QaXMHOh_Zu0

مختصر سی ویڈیو میں ایک چھوٹی چھوٹی پالتو کٹی کو دیکھا جاسکتا ہے جب وہ قریب آ گیا تھا لیکن اس کے قریب ہی اس کا مگرام پڑا تھا جو خاص طور پر کم تھا۔

مگرمچھ کو تالاب کے کنارے پر لاکر پٹخنے لگے اس کے بعد جب ان دونوں ہاتھوں سے پکڑنے پر زور دیا جائے تو انہوں نے زور دیا۔ کچھ سیکنڈ کے بعد وہ مگرمچھ لے گیا جب اس کی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا اور بزرگ کا پالتو کتا وہاں سے بھاگ گیا۔

مقامی لوگوں کے ساتھ ٹیلی ویژن کو گفتگو میں بتایا گیا کہ اس نے پلٹو کا کوٹھیالینے والے گھر سے کچھ دوری اختیار کی ہے ، جہاں وہ دوربشوں کے بیچ میں تھے۔ ابھی وہ تالاب کے پانی سے گذر رہی ہے ایک چھوٹا مگرمچھ اچانک باہر نکلا اور کٹ کو کو جب وہ دبا کر رہا تھا تو بہت تیزی سے تالاب میں غائب ہو گیا تھا۔

مگرمچھ کے پیچھے والے ولبینکس بھی تالاب میں اتر گئے ، مگرمچھ کوہ ہاتھوں میں پکڑ کر پانی سے باہر آگئے اور پھر سے کنارے پر چلے گئے۔

تالاب کے کنارے پر اس نے مگرمچھ کو زمین پر گرایا اور دونوں ہاتھوں پر زور دیا۔ کچھ سیکنڈوں میں مگرمچھ کا جب وہ کھلونے چلا گیا اور کتا آزاد ہو کر دوڑ ہو ا۔

خوش قسمت سے اس کے جسم پر صرف ایک زخم آیا ہے لیکن ولبینکس کے دونوں ہاتھوں سے چھائے ہوئے ہیں۔ البتہ اس زخم معمولی نوعیت کی ہے اور فوری طور پر طبعی امداد کے بعد اس کی تکلیف کم ہوتی ہے۔

میڈیا میڈیا 74 سالہ ولبینکس کی بہادری کی تعریف کرے گی۔ ’فلوریڈا اصل آدمی‘ ‘خطاب بھی کرتا ہے۔



Source link

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here